پاکپتن حکومت کی سود خوروں کے خلاف جاری مہم بے سود ثابت پاکپتن سود خوروں اور قبضہ گروپوں کے نرغے میں بااثر سود خور اور قبضہ مافیاء کے ستائے خاندان انصاف کے لیے ڈی پی آفس پہنچ گئے متاثرین خاندان کے بچے بوڑھے اور خواتین کا ڈی پی او آفس کے باہر احتجاج رانا بابر نامی شخص نے ہمارے گھروں پر قبضہ کر رکھا ہے متاثرین بااثر قبضہ گروپ سود خور مافیاء نے مظلوم شہریوں پر درجنوں جھوٹے مقدمات درج کروارکھے ہیں پولیس بااثر سودخوروں کے خلاف کاروائی سے انکاری ہے متاثرین نے ڈی پی او آفس پاکپتن کے باہر احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ بیمار نوجوان کے علاج کے لیے 50 ہزار روپے سود پر لیے تھے 50 ہزار کے عوض اوپن چیک دیا تھا جس پر بلیک میلر بابر جوکہ قبضہ مافیاء گروپ کا سرغنہ جس نے سرکاری اراضی پر قبضہ کر رکھا نے ان کے گھر پر قبضہ کر لیا ہے محمد طاہر اقبال نے بتایا کہ سود خور بابر اتنا باثر ہے کہ مقامی پولیس بھی اسکے خلاف کاروائی کرنے سے گریزاں ہے ابتک درجنوں مجبور لوگ اس سود خور کا شکار بن چکے ہیں متاثرین سمیرا بی بی ۔نبیل بی بی ۔خالدہ بی بی وغیرہ نے وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار سے فوری نوٹس لینے کا مطالبہ